شہرِ گُل

کچھ نہ تھا شوخیِ رفتارِ صبا کا حاصل

نکہتِ گل کی پھواروں پہ کڑے پہرے تھے

چپمپئ بیل کے سیال نمو پر قدغن

سرو و سوسن کی قطاروں پہ کڑے پہرے تھے

حلقۂ برق میں ارباب گلستاں محبوس

دم بخود راہ گزاروں پہ کڑے پہرے تھے

دفعتاً شور ہوا ٹوٹ گئیں زنجیریں

زمزمہ ریز ہوئیں مہر بلب تصویریں

دو گھڑی کیلئے گھر گھر میں چراغاں سا ہوا

جیسے ضو کاریِ انجم پہ کوئی قید نہیں

بند کلیوں نے تراشیدہ لبوں کو کھولا

پھول سمجھے کہ تبسّم پہ کوئی قید نہیں

گھنگریاں باندھ کے پیروں میں صبا اٹھلائی

جیسے اندازِ ترنّم پہ کوئی قید نہیں

یہ فقط خواب تھا اس خواب کی تعبیر بھی ہے

شہرِ گل میں کوئی ہنستی ہوئی تصویر بھی ہے

شکیب جلالی

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s