سفیر

میں روشنی کا مُغنّی کرن کرن کا سفیر

وہ سیلِ مہ سے کہ رودِ شرار سے آئے

وہ جامِ مے سے کہ چشمِ نگار سے آئے

وہ موجِ باد سے یا آبشار سے آئے

وہ دستِ گل سے کہ پائے فگار سے آئے

وہ لوحِ جاں سے کہ طاقِ مزار سے آئے

وہ قصرِ خواب سے یا خاک زار سے آئے

وہ برگِ سبز سے یا چوبِ دار سے آئے

جہاں کہیں ہو دلِ داغ دار کی تنویر

وہیں کھلیں مری بانہیں، وہیں کٹے زنجیر

شکیب جلالی

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s