نیند نے آنکھ پہ دستک دی تھی

پروین شاکر ۔ غزل نمبر 84
جانے پھر اگلی صدا کِس کی تھی
نیند نے آنکھ پہ دستک دی تھی
موج در موج ستارے نکلے
جھیل میں چاند کرن اُتری تھی
پریاں آئی تھیں کہانی کہنے
چاندنی رات نے لوری دی تھی
بات خوشبو کی طرح پھیل گئی
پیرہن میرا ، شِکن تیری تھی
آنکھ کو یاد ہے وہ پَل اب بھی
نیند جب پہلے پہلے ٹوٹی تھی
عشق تو خیر تھا اندھا لڑکا
حسن کو کون سی مجبوری تھی
کیوں وہ بے سمت ہُوا جب میں نے
اُس کے بازو پہ دُعا باندھی تھی
پروین شاکر

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s