خدا رکھے تجھے قاتل رہے دنیا میں تو برسوں

قمر جلالوی ۔ غزل نمبر 61
نہ طے کرتا تو رہتا قصۂ تیغوں گلوں برسوں
خدا رکھے تجھے قاتل رہے دنیا میں تو برسوں
خدا کی شان واعظ بھی ہجوِئے مئے کرے مجھ سے
کہ جس نے ایک اک ساغر پہ توڑا ہے وضو برسوں
بہارِ گل میں نکلے خوب ارماں دشتِ وحشت کے
رفو گر نے کیا دامن کی کلیوں پر رفو برسوں
قفس کی راحتوں نے یاد گلشن کی بھلا ڈالی
نہ کی صیاد کے گھر آشیاں کی آرزو برسوں
قفس میں خواب جب دیکھ کوئی دیکھا بہاروں کا
دماغِ اہلِ گلشن میں رہی گلشن کی بو برسوں
قمر یہ کیا خبر تھی وہ ہمارے دل میں رہتے ہیں
رہی جن کے لیئے دیر و حرم میں جستجو برسوں
قمر جلالوی

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s