خجل ہوئے پہ یہ توڑی قسم تو کیا ہو گا

قمر جلالوی ۔ غزل نمبر 24
ہمارے بعد جو چھوڑے ستم تو کیا ہو گا
خجل ہوئے پہ یہ توڑی قسم تو کیا ہو گا
یہ سوچتا ہوں سر جھکاتے ہیں پئے سجدہ
سمٹ کے آ گئے دیرو حرم تو کیا ہو گا
یہ بزمِ غیر ہے کچھ آبروئے عشق کا پاس
تھمے نہ اشک اے چشمِ نم تو کیا ہو گا
قمر جلالوی

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s