جاناں کبھی، ان کارگزاراں پہ نظر ہو

جون ایلیا ۔ غزل نمبر 76
خونیں جگراں، سینہ فگاراں پہ نظر ہو
جاناں کبھی، ان کارگزاراں پہ نظر ہو
اے یار کسی شام مرے یار کسی شام
بے رونقی ءِ محفلِ یاراں پہ نظر ہو
رنگ ایک ہے وامت کئی اس کے ہیں سو اے دل
ساری ہی صفِ شوخ نگاراں پہ نظر ہو
جو تجھ سے بھی ہیں بےسروکار اب تری خاطر
آخر کبھی ان بےسروکاراں پہ نظر ہو
جو نام شماراں ہیں ترے اہلِ وفا کے
جانں! کبھی ان نام شماراں پہ نظر ہو
جون ایلیا

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s