کیمیا گر

رضا شاہ!

تجھ پر سلام اجنبی کا!

سلام ایک ہندی سپاہی کا تجھ پر!

مجھے تو کہاں دیکھ سکتا ہے؟

تیری نگاہیں تو البرز کے پار اُفق پر لگی ہیں!

یہاں___ میں ترے بت کے نیچے

چمکتی ہوئی سیڑھیوں پر کھڑا ہوں!

سنا ہے کہ اُس انتہائی عقیدت کی خاطر

جو بخشی گئی تھی تجھے اپنی ذاتِ گرامی سے،

تو نے یہ بت

اپنی فرماں روائی میں

یورپ کے مشہور ہیکل تراشوں سے بنوا کے

اس چوک میں نصب کروا دیا تھا!

اسی سے ہویدا ہے یہ بھی

کہ ملت کی احساں شناسی پہ کتنا بھروسہ تھا تجھ کو!

رضا شاہ!

اے داریوش اور سیروس کے جانشیں

یہ قلم رو،

تجھے جس کی تزئین کی لو لگی تھی

جسے تو خدا کی اماں میں بھی دینا گوارا نہ کرتا،

یہی شہر یور کے الم زا حوادث کے بعد

آج قدموں میں تیرے پڑی ہے،

یہ بے جان لاشہ

جسے تین خونخوار کرگس

نئی اور بڑھتی ہوئی آز سے نوچتے جا رہے ہیں!

وطن اور ولی عہد کی والہانہ محبت،

ترے ہوش و فکر و عمل کے لیے،

کون سی چیز مہمیز کا کام دیتی تھی،

سب جانتے ہیں!

مگر تو وہ معما تھا جس کو

بنیاد سے کوئی مطلب نہ تھا

وہ تو زخموں کو آنکھوں سے روپوش کرنے میں،

چھت اور دیوار و در کی منبّت پہ گلگو نہ ملنے میں

دن رات بے انتہا تندہی سے لگا تھا!

یہ مشہور ہے

تو نے اک روز نادر کی تربت پہ جا کر

کہا تھا:

کہ نادر میں سب خوبیاں تھیں

مگر پیٹ کا اتنا ہلکا

کہ لوگ اس کے مقصود کو بھانپ لیتے!

یہ سچ ہے کہ نادر اگر نیم شب

صبح کے وحشت افزا ارادے کو ا فشا نہ کرنا

تو یوں قتل ہونے کی نوبت نہ آتی!

مگر وہ تری حد سے گزری ہوئی رازداری

کہ جس نے تجھے

اپنے افکار کے قید خانے میں

محصور سا کر دیا تھا،

____وہ زنداں جہاں گھوم پھر کر نگاہیں

فقط اپنا چہرہ دکھاتی تھیں تجھ کو

جہاں ہر عقیدے کو تو

اپنے الہام کے شیشہ ءِ کور میں دیکھتا تھا،

جہاں ایک چھوٹا سا روزن بھی ایسا نہ تھا،

جس میں ملت کے افکار کی ایک کرن کا گزر ہو!

اسی کا نتیجہ، کہ اک روز

کہنے کو باتیں بہت تھیں

مگر سننے والے کہیں بھی نہ تھے،

اور تجھے بھی تو کر ہو گئے تھے!

تجھے اس زمیں سے گئے دو برس ہو چکے ہیں

تری یاد تک مٹ چکی ہے دلوں سے

کبھی یاد کرتا ہے کوئی تو کہتا ہے،

وہ کیمیا گر

جو کرتا رہا سب سے وعدے

کہ لاؤں گا سونا بنا کر

مگر شہریوں کے مس و سیم تک

لے کے چلتا بنا؟

یہ طہران جو تیرے خوابوں میں

پاریس کا نقشِ ثانی تھا،

یوں تو یہاں رہگزاروں میں

بہتا ہے ہر شام سیما فروشوں کا سیلاب جاری،

یہاں رقص گاہوں میں اب بھی

بہت جھلملاتی ہیں محفل کی شمعیں،

یہاں رقص سے چور یا جام و بادہ سے مخمور ہو کر

وطن کے پجاری

بآہنگِ سنتور و تار و دف و نَے

لگاتے ہیں مل کر

وطن! اے وطن! کی صدائیں!

مگر کون جانے یہ کس کا وطن ہے؟

کہ پاریس بھی آج اُس کا ہیولا ہے بے چارگی میں

کہ اُس پر فقط برقِ خرمن گری تھی

اسے شعلہ ہائے نیستاں نگلتے چلے جا رہے ہیں!

ن م راشد