مری محبت جواں رہے گی

مثالِ خورشید و ماہ و انجم مری محبت جواں رہے گی

عروسِ فطرت کے حسنِ شاداب کی طرح جاوداں رہے گی

شعاعِ امید بن کے ہر وقت روح پر ضو فشاں رہے گی

شگفتہ و شادماں کرے گی، شگفتہ و شادماں رہے گی

مری محبت جواں رہے گی

کیا ہے جب سے غمِ محبت نے دیدہ ءِ التفات پیدا

نئے سے کیا ہوئی ہے گویا مرے لیے کائنات پیدا

ہوئی ہے میرے فسردہ پیکر میں آرزوئے حیات پیدا

یہ آرزو اب رگوں میں میری شراب بن کر رواں رہے گی

مری محبت جواں رہے گی!

مجھے محبت نے ذوقِ مثلِ رنگِ سحر دیا ہے

زمانہ بھر کی لطافتوں سے مری جوانی کو بھر دیا ہے

مرے گلستاں کو آشنائے بہارِ جاوید کر دیا ہے

مرے گلستاں میں رنگ و نکہت کی نزہتِ جاوداں رہے گی

مری محبت جواں رہے گی!

ن م راشد