مارِ سیاہ

سرِشام ہم یاسمن سے ملے تھے

وہ بت کی طرح بے زباں اور افسردہ،

اِک کہنہ و خستہ گھر میں،

ہمیں لے کے داخل ہوئی تھی!

کسی پیرہ زن نے ہمارا وہاں

شمعِ لرزاں لیے خیر مقدم کیا تھا،

مَے کم بہا اور خیام سے

میر ی اور دوستوں کی مدارات کی تھی!

مگر یاسمن کی نگاہیں جھکی ہوئی تھیں

وہ بالیں پہ زلفِ سیہ میں

سپیدے کے داغوں کو مجھ سے چھپاتی رہی تھی؛

وہ پھر ہم سے مہمان خانے میں ملتی رہی تھی،

شکر اور قہوے کے ملفوفِ ارزاں

جو بازار میں انتہائی گراں تھے

وہ ہر بار ہم سے بصد معذرت لے کے جاتی رہی تھی!

خیاباں میں وہ مسکرا کر گزرتی،

تماشا گھروں اور تفریح گاہوں کی خلوت کو جلوت بناتی رہی تھی

ہم اس لطفِ آساں ربودہ پہ نازاں رہے تھے!

مگر کل سحر وہ دریچے کے نیچے

جہاں سیب کے اک شجر کے گلابی شگوفے

ابھی کھل رہے تھے

رکی اور کہنے لگی:

آج کے بعد تم یاسمن کو نہیں پا سکو گے

کہ مارِ سیہ بن کے اک اجنبی نے اُسے ڈس لیا ہے!

میں خود اجنبی ہوں

مگر سن کے یوں دم بخود ہو گیا تھا،

کہ جیسے مجھی کو وہ مارِ سیہ ڈس گیا ہو!

میں اُٹھا، خیاباں میں نکلا

اور اک کہنہ مسجد کی دیوار سے لگ کے

آنسو بہاتا رہا!

ن م راشد