سوغات

زندگی ہیزمِ تنّورِ شکم ہی تو نہیں

پارہ ءِ نانِ شبینہ کا ستم ہی تو نہیں

ہوسِ دام و درم ہی تو نہیں

سیم و زر کی جو وہ سوغات جیسا لائی تھی

ہم سہی کاہ، مگر کاہ ربا ہو نہ سکی

دردمندوں کی خدائی ہو نہ سکی

آرزو ہدیہ ءِ اربابِ کرم ہی تو نہیں!

ہم نے مانا کہ ہیں جاروب کشِ قصرِ حرم

کچھ وہ احباب جو خاکسترِ زنداں نہ بنے

شبِ تاریکِ وفا کے مہِ تاباں نہ بنے

کچھ وہ ا حباب بھی ہیں جن کے لیے

حیلہ ءِ امن ہے خود ساختہ خوابوں کا فسوں

کچھ وہ احباب بھی ہیں، جن کے قدم

راہ پیما تو رہے، راہ شناسا نہ ہوئے

غم کے ماروں کا سہارا نہ ہوئے!

کچھ وہ مردانِ جنوں پیشہ بھی ہیں جن کے لیے

زندگی غیر کا بخشا ہوا سم ہی تو نہیں

آتشِ دَیر و حرم ہی تو نہیں!

ن م راشد