سبا ویراں

سلیماں سر بزانو اور سبا ویراں

سبا ویراں، سبا آسیب کا مسکن

سب آلام کا انبارِ بے پایاں!

گیاہ و سبزہ وگُل سے جہاں خالی

ہوائیں تشنہ ءِ باراں،

طیور اِس دشت کے منقار زیرِ پر

تو سرمہ در گلو انساں

سلیماں سر بزانو اور سبا ویراں!

سلیماں سر بزانو، تُرش رو، غمگیں، پریشاں مُو

جہانگیری، جہانبانی، فقط طرارہ ءِ آہو،

محبت شعلہ ءِ پرّاں، ہوس بوئے گُلِ بے بُو

ز رازِ دہرِ کمتر گو!

سبا ویراں کہ اب تک اس زمیں پر ہیں

کسی عیار کے غارت گروں کے نقشِ پا باقی

سبا باقی، نہ مہروئے سبا باقی!

سلیماں سر بہ زانو،

اب کہاں سے قاصدِ فرخندہ پَے آئے؟

کہاں سے، کس سبو سے کا سہ ءِ پیری میں مَے آئے؟

ن م راشد