سایہ

کسی خواب آلودہ سائے کا پیکر

کہاں تک ترے گوش شِنوا، تری چشمِ بینا، ترے قلبِ دانا

کا ملجا و ماویٰ بنے گا؟

تجھے آج سائے کے ہونٹوں سے حکمت کی باتیں گوارا،

تجھے آج سائے کے آغوش میں شعر و نغمہ کی راتیں گوارا،

گوارا ہیں اُس زندگی سے کہ جس میں کئی کارواں راہ پیما رہے ہیں!

مگر کل ترے لب پہ پہلی سی آہوں کی لپٹیں اٹھیں گی،

ترا دل اُنہی کاروانوں کو ڈھونڈے گا،

اُن کو پکارے گا،

جو جسم کی چشمہ گاہوں پر رکتے ہیں آ کر

جنھیں سیریِ جاں کی پوشیدہ راہوں کی ساری خبر ہے!

یہ تسلیم، سائے نے تجھ کو

وہ پہنائیاں دیں

افق سے بلند اور بالا

جو تیری نگاہوں کے مرئی حجابوں میں پنہاں رہی تھیں،

وہ اسرار تجھ پر ہویدا کیے، جن کا ارماں

فلاطوں سے اقبال تک سب کے سینوں کی دولت رہا ہے؛

وہ اشعار تجھ کو سنائے، جو حاصل ہیں ورجل سے لے کر

سبک مایہ راشد کے سوز و دروں کا

کہ تُو بھول جائے وہ صرصر، وہ گرداب جن میں

تری زندگی واژگوں تھی،

تری زندگی خاک و خوں تھی!

تُو اسرار و اشعار سنتی رہی ہے،

مگر دل ہی دل میں تُو ہنستی رہی ہے

تو سیّال پیکر سے، سائے سے، غم کے کنائے سے کیا پا سکے گی؟

جب اس کے ورا، اس سے زندہ توانا بدن

رنگ و لذت کے مخزن، ہزاروں

تمنا کے مامن ہزاروں!

کبھی خواب آلودہ سائے کی مہجور و غم دیدہ آنکھیں

ترے خشک مژگاں کو رنجور و نم دیدہ کرتی رہی ہیں

تو پھر بھی تُو ہنستی رہی ہے!

ن م راشد