داشتہ

میں ترے خندہ ءِ بے باک سے پہچان گیا

کہ تری روح کو کھاتا سا چلا جاتا ہے،

کھوکھلا کرتا چلا جاتا ہے، کوئی المِ زہرہ گداز

میں تو اس پہلی ملاقات میں یہ جان گیا!

آج یہ دیکھ کے حیرت نہ ہوئی

کہ تری آنکھوں سے چپ چاپ برسنے لگے اشکوں کے سحاب؛

اس پہ حیرت تو نہیں تھی، لیکن

کسی ویرانے میں سمٹے ہوئے خوابیدہ پرندے کی طرح

ایک مبہم سا خیال

دفعتاً ذہن کے گوشے میں ہوا بال فشاں:

کہ تجھے میری تمنا تو نہیں ہو سکتی

آج، لیکن مری باہوں کے سہارے کی تمنا ہے ضرور،

یہ ترے گریہ ءِ غمناک سے میں جان گیا

تجھ سے وابستگیِ شوق بھی ہے،

ہو چلی سینے میں بیدار وہ دل سوزی بھی

مجھ سے مہجورِ ازل جس پہ ہیں مجبورِ ازل!

نفسِ خود بیں کی تسلی کے لیے

وہ سہارا بھی تجھے دینے پہ آمادہ ہوں

تجھے اندوہ کی دلدل سے جو آزاد کرے

کوئی اندیشہ اگر ہے تو یہی

تیرے ان اشکوں میں اک لمحے کی نومیدی کا پرتو ہو تو کہیں،

اور جب وقت کی امواج کو ساحل مل جائے

یہ سہارا تری رسوائی کا اک اور بہانہ بن جائے!

جس طرح شہر کا وہ سب سے بڑا مردِ لئیم

جسم کی مزدِ شبانہ دے کر

بن کے رازق تری تذلیل کیے جاتا ہے

میں بھی باہوں کا سہارا دے کر____

تیری آئندہ کی توہین کا مجرم بن جاؤں!

ن م راشد