برزخ

ن م راشد

سنہ 1955

شاعر:

اے مِری رُوح تجھے

اب یہ برزخ کے شب و روز کہاں راس آئیں

عشق بپھرا ھوُ دریا ھے، ھوس خاک سیاہ

دست و بازوُ نہ سفینہ کہ یہ دریا ھو عبوُر

اور اس خاکِ سیاہ پر تو نشان کفِ پا تک نہیں

اُجڑے بے برگ درختوں سے فقط کاسہء سر آویزاں

کِسی سفّاک تباھی کی اَلمناک کہانی بن کر!

اے مِری رُوح، جُدائی سے حَزیں رُوح مِری

تجھے برزخ کے شب و روز کہاں راس آئیں؟

رُوح:

میرا ماوےٰ نہ جہنم، مِرا مَلجا نہ بہشت

برزخ اُن دونوں پر اِک خندہء تضحیک تو ھے

ایک برزخ ھے جہاں جوروستم، جودوکرم کچھ بھی نہیں

اس میں وہ نفس کی صَرصَر بھی نہیں

جسم کے طوُفاں بھی نہیں

مُبتلا جن میں ھم انسان سدا رھتے ھیں

ھم سیہ بخت زمیں پر ھوں، فلک پر ھوں کہیں

ایک برزخ ھے جہاں مَخمل و دیبا کی آسُودگی ھے

خوابِ سرما کی سی آسُودگی ھے

ن م راشد