آگ کے پاس

پیرِ واماندہ کوئی

کوٹ پہ محنت کی سیاہی کے نشاں

نوجوان بیٹے کی گردن کی چمک دیکھتا ہوں

(اِک رقابت کی سیاہ لہر بہت تیز

مرے سینہ ءِ سوزاں سے گزر جاتی ہے)

جس طرح طاق پہ رکھے ہوئے گلداں کی

مس و سیم کے کاسوں کی چمک!

اور گلو الجھے ہوئے تاروں سے بھر جاتا ہے

کوئلے آگ میں جلتے ہوئے

کن یادوں کی کس رات میں

جل جاتے ہیں؟

کیا انہی کانوں کی یادوں میں جہاں

سال ہا سال یہ آسودہ رہے؟

انہی بے آب درختوں کے وہ جنگل

جنہیں پیرانہ سری بار ہوئی جاتی تھی؟

کوئلے لاکھوں برس دور کے خوابوں میں الجھ جاتے ہیں

آج شب بھی وہ بڑی دیر سے

گھر لوٹا ہے

اس کے الفاظ کو

ان رنگوں سے، آوازوں سے کیا ربط

جو اس غم زدہ گھر کے خس و خاشاک میں ہیں؟

اس کو اس میز پہ بکھری ہوئی

خوشبوؤں کے جنگل سے غرض؟

آج بھی اپنے عقیدے پہ بدستور

بضد قائم ہے!

وہ درختوں کے تنومند تنے

(اپنے آئندہ کے خوابوں میں اسیر)

گرد باد آ ہی گئے

ان کی رہائی کا وسیلہ بن کر

خود سے مہجورئ ناگاہ کا حیلہ بن کر

آئے اور چل بھی دیے

طولِ المناک کی دہلیز پہ

’’رخصت‘‘ کہہ کر

اور وہ لاکھوں برس سوچ میں

آیندہ کے موہوم میں خوابیدہ رہے!

میرے بیٹے، تجھے کچھ یاد بھی ہے

میں نے بھی شور مچایا تھا کبھی

خاک کے بگڑے ہوئے چہرے کے خلاف؟

لحنِ بے رنگ ہوا سن کے

مری جاں بھی پکار اٹھّی تھی؟

میں کبھی ایک انا اور کبھی دو کا سہارا لیتا

اپنی ساتھی سے میں کہہ اٹھتا کہ ’’جاگو، اے جان!

ہر انا تیرہ بیاباں میں

بھٹکتے ہوئے پتوں کا ہجوم!

میرا ڈر مجھ کو نگل جائے گا‘‘

میرے کانوں میں مرے کرب کی آواز

پلٹ آتی تھی

’’تجھے بے کار خداؤں پہ یقیں

اب بھی نہیں؟

اب بھی نہیں؟

آج بھی اپنے ہی الحاد کی کرسی میں

پڑا اونگھتا ہوں

نوجواں بیٹے کے الفاظ پہ چونک اٹھتا ہوں:

تو نے، بیٹے،

یہ عجب خواب سنایا ہے مجھے

اپنا یہ خواب کسی اور سے ہر گز نہ کہو!‘‘

کبھی آہستہ سے دروازہ جو کھلتا ہے تو ہنس دیتا ہوں

یہ بھی اس رات کی صر صر کی

نئی چال، نیا دھوکا ہے!

’’پھول یا پریاں بنانے کا کوئی نسخہ

مرے پاس نہیں ہے بیٹے

مجھے فرداؤں کے صحرا سے بھی

افسونِ روایت کی لہک آتی ہے

آگ میں کوئلے بجھنے کی تمنا نہ کرو

ان سے آیندہ کے مٹتے ہوئے آثار

ابھر آئیں گے

ان گزرتے ہوئے لمحات کی تنہائی میں

کیسا یہ خواب سنایا ہے مجھے تو نے ابھی

نہیں، ہر ایک سے،

ہر ایک سے یہ خواب کہو

اس سے جاگ اٹھتا ہے

سویا ہوا مجذوب

مری آگ کے پاس

ایسے مجذوب کو اک خواب بہت

خواب بہت۔۔۔۔۔ خواب بہت۔۔۔

ایسے ہر مست کو

اک خواب بہت!

ن م راشد