آئینہ حسّ و خبر سے عاری

آئینہ حسّ و خبر سے عاری،

اس کے نابود کو ہم ہست بنائیں کیسے؟

منحصر ہستِ تگا پوئے شب و روز پہ ہے

دلِ آئینہ کو آئینہ دکھائیں کیسے؟

دلِ آئینہ کی پہنائی بے کار پہ ہم روتے ہیں،

ایسی پہنائی کہ سبزہ ہے نمو سے محروم

گلِنو رستہ ہے بو سے محروم!

آدمی چشم و لب و گوش سے آراستہ ہیں

لطفِ ہنگامہ سے نورِمن و تو سے محروم!

مے چھلک سکتی نہیں، اشک کے مانند یہاں

اور نشّے کی تجلّی بھی جھلک سکتی نہیں

نہ صفائے دلِ آئینہِگزرگاہِ خیال!

آئینہ حسّ و خبر سے عاری

اس کے نابود کو ہم ہست بنائیں کیسے؟

آئینہ ایسا سمندر ہے جسے

کر دیا دستِ فسوں گر نے ازل میں ساکن!

عکس پر عکس در آتا ہے یہ امّید لیے

اس کے دم ہی سے فسونِ دلِ تنہا ٹوٹے

یہ سکوتِ اجل آسا ٹوٹے!

آئینہ ایک پر اسرار جہاں میں اپنے

وقت کی اوس کے قطروں کی صدا سنتا ہے،

عکس کو دیکھتا ہے، اور زباں بند ہے وہ

شہر مدفون کے مانند ہے وہ!

اس کے نابود کو ہم ہست بنائیں کیسے؟

آئینہ حسّ و خبر سے عاری!

ن م راشد