ہے داغِ عشق، زینتِ جیبِ کفن ہنوز

دیوانِ غالب ۔ غزل نمبر 127
فارغ مجھے نہ جان کہ مانندِ صبح و مہر
ہے داغِ عشق، زینتِ جیبِ کفن ہنوز
ہے نازِ مفلساں "زرِ ا ز دست رفتہ” پر
ہوں "گل فروِشِ شوخئ داغِ کہن” ہنوز
مے خانۂ جگر میں یہاں خاک بھی نہیں
خمیازہ کھینچے ہے بتِ بیدادِ فن ہنوز
مرزا اسد اللہ خان غالب