گر کمیں گاہِ نظر میں دل تماشائ نہ ہو

دیوانِ غالب ۔ غزل نمبر 147
حسنِ بے پروا گرفتارِ خود آرائ نہ ہو
گر کمیں گاہِ نظر میں دل تماشائ نہ ہو
ہیچ ہے تاثیرِ عالم گیرئ ناز و ادا
ذوقِ عاشق گر اسیرِ دامِ گیرائ نہ ہو
خود گدازِ شمع آغازِ فروغِ شمع ہے
سوزشِ غم درپۓ ذوقِ شکیبائ نہ ہو
تار تارِ پیرہن ہے اک رگِ جانِ جنوں
عقلِ غیرت پیشہ حیرت سے تماشائ نہ ہو
بزمِ کثرت عالمِ وحدت ہے بینا کے لۓ
بے نیازِ عشق اسیرِ زورِ تنہائ نہ ہو
ہے محبت رہزنِ ناموسِ انساں اے اسدؔ
قامتِ عاشق پہ کیوں ملبوسِ رسوائ نہ ہو
نوٹ از مولانا مہر: یہ غزل مولانا عبد الباری آسی کی کتاب سے منقول ہے لیکن اہلِ نظر مجموعۂ آسی میں میں شائع شدہ پورے غیر مطبوعہ کلام کا انتساب صحیح نہیں سمجھتے
مرزا اسد اللہ خان غالب