نقشِ پا جو کان میں رکھتا ہے انگلی جادہ سے

دیوانِ غالب ۔ غزل نمبر 219
آمدِ سیلابِ طوفانِ صدائے آب ہے
نقشِ پا جو کان میں رکھتا ہے انگلی جادہ سے
بزم مے وحشت کدہ ہے کس کی چشمِ مست کا
شیشے میں نبضِ پری پنہاں ہے موجِ بادہ سے
مرزا اسد اللہ خان غالب