لبوں پہ جان بھی آجاۓ گی جواب کے ساتھ

دیوانِ غالب ۔ غزل نمبر 184
نہ پوچھ حال اس انداز اس عتاب کے ساتھ
لبوں پہ جان بھی آجاۓ گی جواب کے ساتھ
مجھے بھی تاکہ تمنّا سے ہو نہ مایوسی
ملو رقیب سے لیکن ذرا حجاب کے ساتھ
نـہ ہو بـہ ہـرزہ روادارِ سـعـئ بـے ہـودہ
کہ دورِ عیش ہے مانا خیال و خواب کے ساتھ
بـہ ہر نـمـط غـمِ دل باعـثِ مسـرّت ہے
نموۓ حیرتِ دل ہے ترے شباب کے ساتھ
لـگاؤ اس کا ہـے بـاعـث قــیامِ مسـتی کا
ہَوا کو لاگ بھی ہے کچھ مگر حباب کے ساتھ
ہـزار حـیف کـہ اتنـا نـہیں کـوئ غالب
کہ جاگنے کو ملا دے وے آکے خواب کے ساتھ
نوٹ از مولانا مہر: یہ غزل مولانا عبد الباری آسی کی کتاب سے منقول ہے لیکن اہلِ نظر مجموعۂ آسی میں میں شائع شدہ پورے غیر مطبوعہ کلام کا انتساب صحیح نہیں سمجھتے
مرزا اسد اللہ خان غالب