شوخئِ وحشت سے افسانہ فسونِ خواب تھا

دیوانِ غالب ۔ غزل نمبر 98
شب کہ ذوقِ گفتگو سے تیرے، دل بے تاب تھا
شوخئِ وحشت سے افسانہ فسونِ خواب تھا
واں ہجومِ نغمہ ہائے سازِ عشرت تھا اسدؔ
ناخنِ غم یاں سرِ تارِ نفس مضراب تھا
مرزا اسد اللہ خان غالب