حیراں کیے ہوئے ہیں دلِ بے قرار کے

دیوانِ غالب ۔ غزل نمبر 231
سیماب پشت گرمیِ آئینہ دے ہے ہم
حیراں کیے ہوئے ہیں دلِ بے قرار کے
آغوشِ گل کشودہ برائے وداع ہے
اے عندلیب چل! کہ چلے دن بہار کے
مرزا اسد اللہ خان غالب