تغیر ” آبِ برجا ماندہ” کا پاتا ہے رنگ آخر

دیوانِ غالب ۔ غزل نمبر 119
صفائے حیرت آئینہ ہے سامانِ زنگ آخر
تغیر ” آبِ برجا ماندہ” کا پاتا ہے رنگ آخر
نہ کی سامانِ عیش و جاہ نے تدبیر وحشت کی
ہوا جامِ زُمرّد بھی مجھے داغ پِلنگ آخر
مرزا اسد اللہ خان غالب