بناۓ خندۂ عشرت ہے بر بِناۓ چمن

دیوانِ غالب ۔ غزل نمبر 138
خزینہ دارِ محبت ہوئ ہواۓ چمن
بناۓ خندۂ عشرت ہے بر بِناۓ چمن
بہ ہرزہ سنجئ گلچیں نہ کھا فریبِ نظر
ترے خیال کی وسعت میں ہے فضاۓ چمن
یہ نغمۂ سنجئ بلبل متاعِ زحمت ہے
کہ گوشِ گل کو نہ راس آۓ گی صداۓ چمن
صداۓ خندۂ گل تا قفس پہنچتی ہے
نسیمِ صبح سے سنتا ہوں ماجراۓ چمن
گل ایک کاسۂ دریـوزۂ مسرّت ہے
کہ عندلیبِ نواسنج ہے گداۓ چمن
حریفِ نالۂ پرورد ہے، تو ہو، پھر بھی
ہے اک تبسّمِ پنہاں ترا بہاۓ چمن
بـہـار راہ رو جـادۂ فنـا ہـے اسدؔ
گلِ شگفتہ ہیں گویا کہ نقشِ پاۓ چمن
نوٹ از مولانا مہر: یہ غزل مولانا عبد الباری آسی کی کتاب سے منقول ہے لیکن اہلِ نظر مجموعۂ آسی میں میں شائع شدہ پورے غیر مطبوعہ کلام کا انتساب صحیح نہیں سمجھتے
مرزا اسد اللہ خان غالب