مرغان باغ سارے گویا ہیں اس کے مارے

دیوان ششم غزل 1906
طائر فریب کتنا ہے وہ شکار پیشہ
مرغان باغ سارے گویا ہیں اس کے مارے
میر تقی میر