یار کے تیر جان لے جا بھی

دیوان اول غزل 457
چھن گیا سینہ بھی کلیجا بھی
یار کے تیر جان لے جا بھی
کیوں تری موت آئی ہے گی عزیز
سامنے سے مرے ارے جا بھی
حال کہہ چپ رہا جو میں بولا
کس کا قصہ تھا ہاں کہے جا بھی
میں کہا میر جاں بلب ہے شوخ
تونے کوئی خبر کو بھیجا بھی
کہنے لاگا نہ واہی بک اتنا
کیوں ہوا ہے سڑی ابے جا بھی
میر تقی میر