ہوا ہوں زعفراں کا کھیت تیرے عشق میں پیارے

دیوان اول غزل 633
مرے رنگ شکستہ پہ ہنسے ہیں مردماں سارے
ہوا ہوں زعفراں کا کھیت تیرے عشق میں پیارے
عرق گرتا ہے تیری زلف سے اور دل سہمتا ہے
کہ شب تاریک ہے اور ٹوٹتے ہیں دم بدم تارے
میر تقی میر