ہر پارہ اس کا پاتے ہیں آوارہ دردمند

دیوان پنجم غزل 1603
رکھتا ہے دل کنار میں صدپارہ دردمند
ہر پارہ اس کا پاتے ہیں آوارہ دردمند
تسکین اپنے دل کی جو پاتا نہیں کہیں
جز صبر اور کیا کرے بے چارہ دردمند
اسلامی کفری کوئی ہو ہے شرط درد عشق
دونوں طریق میں نہیں ناکارہ دردمند
قابل ہوئی ہیں سیر کے چشمان خوں فشاں
دیکھیں ہیں آنکھوں لوہو کا فوارہ دردمند
کیا کام اس کو یاں کے نشیب و فراز سے
رکھتا ہے پاؤں دیکھ کے ہموارہ دردمند
اس کارواں سراے کے ہیں لوگ رفتنی
حسرت سے ان کا کرتے ہیں نظارہ دردمند
سو بار حوصلے سے اگر رنج کش ہو میر
پھر فرط غم سے مر رہے یک بارہ دردمند
میر تقی میر