کیا کیا نہ ابر آکر یاں زور زور برسے

دیوان اول غزل 578
کوئی ہوا نہ روکش ٹک میری چشم تر سے
کیا کیا نہ ابر آکر یاں زور زور برسے
وحشت سے میری یارو خاطر نہ جمع رکھیو
پھر آوے یا نہ آوے نوپر اٹھا جو گھر سے
اب جوں سر شک ان سے پھرنے کی چشم مت رکھ
جو خاک میں ملے ہیں گر کر تری نظر سے
دیدار خواہ اس کے کم ہوں تو شور کم ہو
ہر صبح اک قیامت اٹھتی ہے اس کے در سے
داغ ایک ہو جلا بھی خوں ایک ہو بہا بھی
اب بحث کیا ہے دل سے کیا گفتگو جگر سے
دل کس طرح نہ کھینچیں اشعار ریختے کے
بہتر کیا ہے میں نے اس عیب کو ہنر سے
انجام کار بلبل دیکھا ہم اپنی آنکھوں
آوارہ تھے چمن میں دو چار ٹوٹے پر سے
بے طاقتی نے دل کی آخر کو مار رکھا
آفت ہمارے جی کی آئی ہمارے گھر سے
دلکش یہ منزل آخر دیکھا تو آہ نکلی
سب یار جاچکے تھے آئے جو ہم سفر سے
آوارہ میر شاید واں خاک ہو گیا ہے
یک گرد اٹھ چلے ہے گاہ اس کی رہگذر سے
میر تقی میر