کہ گڑے ہوئے پھر اکھڑیں دل چاک دردمنداں

دیوان اول غزل 303
تو گلی میں اس کی جا آ ولے اے صبا نہ چنداں
کہ گڑے ہوئے پھر اکھڑیں دل چاک دردمنداں
ترے تیر ناز کے جو یہ ہدف ہوئے ہیں ظالم
مگر آہنی توے ہیں جگر نیازمنداں
کبھو زلف سے بتاں کی نہ ہوا رہا میں ہرگز
یہی ہیں شکار خستہ یہی عنبریں کمنداں
تبھی کوند کوند اتنا تو زمیں سے جائے مل مل
نہیں دیکھے برق تونے دم خندہ اس کے دنداں
میں صفا کیا دل اتنا کہ دکھائی دیوے منھ بھی
ولے مفت اس آئینے کو نہیں لیتے خود پسنداں
کھلیں آنکھیں میں جو دیکھا سو غم اور چشم گریاں
کسے کہتے ہیں نہ جانا دل شاد و روے خنداں
تو زبوں شکار تو تھا ولے میر قتل گہ میں
ترے خوں سے ہیں حنائی کف پاے صیدبنداں
میر تقی میر