کہ مٹی کوڑے کا اب ہے بچھونا

دیوان پنجم غزل 1563
جدا اس سیم تن سے کیسا سونا
کہ مٹی کوڑے کا اب ہے بچھونا
بہت کی جستجو اس کی نہ پایا
ہمیں درپیش ہے اب جی کا کھونا
جگر کے زخم شاید ہیں نمک بند
مزہ کچھ آنسوئوں کا ہے سلونا
میر تقی میر