کہ عالم جوان سیہ پوش ہے

دیوان اول غزل 622
مرے درد دل کا تو یہ جوش ہے
کہ عالم جوان سیہ پوش ہے
کیا روبرو اس کے کیوں آئینہ
کہ بے ہوشی اس کا دم اور ہوش ہے
کبھو تیر سا اس کماں میں بھی آ
کہ خمیازہ کش میری آغوش ہے
بلائوں میں اس دور بد کی تو نئیں
جہاں میں خوشا حال مے نوش ہے
میر تقی میر