کہو کس طرح نئیں صبا چوربادی

دیوان اول غزل 630
اڑا برگ گل کو دکھاتی ہے وادی
کہو کس طرح نئیں صبا چوربادی
میں لبریز تجھ نام سے جوں نگیں تھا
رہی لوح تربت مری کیونکے سادی
ترے غم میں ہے زیست اور موت یکساں
نہ مرنے کا ماتم نہ جینے کی شادی
میں ہوں بے نوا میر ایسا کہ شب کو
فغاں سے کہوں ٹک کھڑے رہیو ہادی
میر تقی میر