کس خوش سلیقگی سے جگر خوں کروں ہوں میں

دیوان سوم غزل 1216
مصرع کوئی کوئی کبھو موزوں کروں ہوں میں
کس خوش سلیقگی سے جگر خوں کروں ہوں میں
بات اپنے ڈھب کی کوئی کرے وہ تو کچھ کہوں
بیٹھا خموش سامنے ہوں ہوں کروں ہوں میں
اس بن نظر زمین سے سی دی ہے تو کہے
کاہے کو چشم جانب گردوں کروں ہوں میں
اٹھتا ہے بے دماغ ہی ہرچند رات کو
افسانہ کہتے سینکڑوں افسوں کروں ہوں میں
کب بے دماغی شہر سے دیتی ہے اٹھنے میر
یوں تو خیال وادی مجنوں کروں ہوں میں
میر تقی میر