کاشکے پردے ہی میں بولو تم

دیوان دوم غزل 861
کون کہتا ہے منھ کو کھولو تم
کاشکے پردے ہی میں بولو تم
حکم آب رواں رکھے ہے حسن
بہتے دریا میں ہاتھ دھولو تم
کیا سراہیں ہم اپنی جنس کو لیک
دل عجب ہے متاع جو لو تم
جانا آیا ہے اب جہاں سے ہمیں
تھوڑی تو دور ساتھ ہو لو تم
جب میسر ہو بوسہ اس لب کا
چپکے ہی ہو رہو نہ بولو تم
پنجہ مرجاں کا پھر دھرا ہی رہے
ہاتھ خوں میں مرے ڈبولو تم
دست دے ہے کسے پلک سی میل
دل جہاں پائو اب پرولو تم
آتے ہیں متصل چلے آنسو
آہ کب تک یہ موتی رولو تم
رات گذری ہے سب تڑپتے میر
آنکھ لگ جائے ٹک تو سولو تم
میر تقی میر