چھاتی پہ بعد مرگ بھی دل جم ہے زیر خاک

دیوان اول غزل 253
بے چین مجھ کو چاہتا ہر دم ہے زیر خاک
چھاتی پہ بعد مرگ بھی دل جم ہے زیر خاک
آسودگی جو چاہے تو مرنے پہ دل کو رکھ
آشفتگی طبع بہت کم ہے زیرخاک
تنہا تو اپنی گور میں رہنے پہ بعد مرگ
مت اضطراب کریو کہ عالم ہے زیر خاک
مجنوں نہ تھا کہ جس کے تئیں سونپ کر مروں
آشفتگی کا مجھ کو نپٹ غم ہے زیر خاک
رویا تھا نزع میں میں اسے یاد کر بہت
اب تک مری ہر ایک مژہ نم ہے زیر خاک
کیا آسماں پہ کھینچے کوئی میر آپ کو
جانا جہاں سے سب کو مسلم ہے زیر خاک
میر تقی میر