نہ یہی خوں دل و جگر ہے بس

دیوان سوم غزل 1142
عشق میں غم نہ چشم تر ہے بس
نہ یہی خوں دل و جگر ہے بس
رہ گئے منھ نہوں سے نوچ کے ہم
گر ہوس ہے اسی قدر ہے بس
آپ سے جا کے پھر نہ آئے ہم
بس ہمیں تو یہی سفر ہے بس
چاہ میں ہم نہیں زیادہ طلب
کبھو پوچھو جو تم خبر ہے بس
چشم پوشی نہ کر فقیر ہے میر
مہر کی اس کو اک نظر ہے بس
میر تقی میر