نہیں کیا سیل اشک اس پر بہوں گا

دیوان دوم غزل 765
سمندر کا میں کیوں احساں سہوں گا
نہیں کیا سیل اشک اس پر بہوں گا
نہ تو آوے نہ جاوے بے قراری
یوں ہی اک دن سنا میں مر رہوں گا
ترے غم کے ہیں خواہاں سب نہ کھا غم
کمی کیا ہو گی جو اک میں نہ ہوں گا
نہ وہ آوے نہ جاوے بے قراری
کسو دن میر یوں ہی مررہوں گا
اگر جیتا رہا میں میر اے یار
تو شب کو موبمو قصہ کہوں گا
میر تقی میر