نومیدیاں ہیں کتنی ہی مہمان آرزو

دیوان اول غزل 410
آنکھوں سے دل تلک ہیں چنے خوان آرزو
نومیدیاں ہیں کتنی ہی مہمان آرزو
یک چشم اس طرف بھی تو کافر کہ تو ہی ہے
دین نگاہ حسرت و ایمان آرزو
آیا تو اور رنگ رخ یاس چل بسا
جانے لگا تو چلنے لگی جان آرزو
اس مجہلے کو سیر کروں کب تلک کہ ہے
دست ہزار حسرت و دامان آرزو
پامال یاس آہ کہاں تک رہوں گا میر
سرمشق کیوں کیا تھا میں دیوان آرزو
میر تقی میر