موقوف رحم پر ہیں دشوار کام سارے

دیوان پنجم غزل 1769
صاحب ہو تم ہمارے بندے ہیں ہم تمھارے
موقوف رحم پر ہیں دشوار کام سارے
ہو ملتفت کہ ہم بھی جیتوں میں آویں چندے
یہ عشق بے محابا تاچند جان مارے
آشوب بحر ہستی کیا جانیے ہے کب سے
موج و حباب اٹھ کر لگ جاتے ہیں کنارے
کوئی تو تھا طرف پر آواز دی نہ ہم کو
ہم بے قرار ہوکر چاروں طرف پکارے
بے طاقتی سے کیونکر سر مارتے رہیں نہ
صبر و قرار دونوں یک بارگی سدھارے
کوئی تو ماہ پارہ اس بھی رواق میں ہے
چشمک کریں ہیں ہر شب اس کی طرف ستارے
دنیا میں میر آکر کھولا ہے بار ہم نے
اس رہگذر میں دیکھیں کیا پیش آوے بارے
میر تقی میر