صحرا میں رفتہ رفتہ کانٹوں نے سر اٹھایا

دیوان اول غزل 172
پاے پر آبلہ سے مجھ کو بنی گئی ہے
صحرا میں رفتہ رفتہ کانٹوں نے سر اٹھایا
میر تقی میر