سہل آگے اس کے مردن دشوار ہو گیا

دیوان پنجم غزل 1552
ناگاہ جس کو عشق کا آزار ہو گیا
سہل آگے اس کے مردن دشوار ہو گیا
ہے حسن کیا متاع کہ جس کو نظر پڑی
وہ جان بیچ کر بھی خریدار ہو گیا
برسوں تئیں جہان میں کیوں کر رہا ہے خضر
میں چار دن میں جینے سے بیزار ہو گیا
ہم بستری بن اس کی میں صاحب فراش ہوں
ہجراں میں کڑھتے کڑھتے ہی بیمار ہو گیا
ہم دام تھے سو چھٹ گئے سب دام کے اٹھے
تھی دل کو میرے چوٹ گرفتار ہو گیا
اس کی نگاہ مست کا کھایا ہی تھا فریب
پر شیخ طرز دیکھ کے ہشیار ہو گیا
کیا متقی تھا میر پر آئین عشق میں
مجرم سا کشت و خوں کا سزاوار ہو گیا
میر تقی میر