سنا کریے کہ یہ بھی اک سخن ہے

دیوان اول غزل 473
کلی کہتے ہیں اس کا سا دہن ہے
سنا کریے کہ یہ بھی اک سخن ہے
ٹپکتے درد ہیں آنسو کی جاگہ
الٰہی چشم یا زخم کہن ہے
خبر لے پیر کنعاں کی کہ کچھ آج
نپٹ آوارہ بوے پیرہن ہے
نہیں دامن میں لالہ بے ستوں کے
کوئی دل داغ خون کوہکن ہے
شہادت گاہ ہے باغ زمانہ
کہ ہر گل اس میں اک خونیں کفن ہے
کروں کیا حسرت گل کو وگرنہ
دل پر داغ بھی اپنا چمن ہے
جو دے آرام ٹک آوارگی میر
تو شام غربت اک صبح وطن ہے
میر تقی میر