زندگانی حیف ہے مر جایئے

دیوان دوم غزل 1018
پر نہیں جو اڑ کے اس در جایئے
زندگانی حیف ہے مر جایئے
کچھ نہیں تو شعر ہی کی فکر کر
آئے ہیں جو یاں تو کچھ کر جایئے
قصد ہے کعبے کا لیکن سوچ ہے
کیا ہے منھ جو اس کے در پر جایئے
خانماں آباد جو ہے سو خراب
کس کے اٹھ کر شہر میں گھر جایئے
بیم مردن اس قدر یہ کیا ہے میر
عشق کریے اور پھر ڈر جایئے
میر تقی میر