رگ ابر تھا تارتارگریباں

دیوان اول غزل 318
کیا میں نے رو کر فشارگریباں
رگ ابر تھا تارتارگریباں
کہیں دست چالاک ناخن نہ لاگے
کہ سینہ ہے قرب و جوارگریباں
نشاں اشک خونیں کے اڑتے چلے ہیں
خزاں ہوچلی ہے بہار گریباں
جنوں تیری منت ہے مجھ پر کہ تونے
نہ رکھا مرے سر پہ بارگریباں
زیارت کروں دل سے خستہ جگر کی
کہاں ہو گی یارب مزارگریباں
کہیں جائے یہ دور دامن بھی جلدی
کہ آخر ہوا روزگارگریباں
پھروں میر عریاں نہ دامن کا غم ہو
نہ باقی رہے خارخارگریباں
میر تقی میر