رونے سے تب تو میری کچھ آنکھیں جلتیاں ہیں

دیوان سوم غزل 1199
چنگاریاں گرے ہیں جب پلکیں ہلتیاں ہیں
رونے سے تب تو میری کچھ آنکھیں جلتیاں ہیں
آنکھیں ملا کے اس سے ٹک دیکھو حال دل کا
وے انکھڑیاں جیوں کو اپنے تو ملتیاں ہیں
ہم تو بھی فصل گل میں چل ٹک تو پاس بیٹھیں
سر جوڑ جوڑ کیسی کلیاں نکلتیاں ہیں
مذکور دخت رز کا کیا شیخ رہگذر میں
اس سے ابھی ہماری باتیں ہی چلتیاں ہیں
دیکھیں تو میر کیا ہو بے طاقتی سے حالت
اب دیر دیر جانیں اپنی سنبھلتیاں ہیں
میر تقی میر