رسوائیاں گئی ہیں عقیق یمن تلک

دیوان اول غزل 262
کب دسترس ہے لعل کو تیرے سخن تلک
رسوائیاں گئی ہیں عقیق یمن تلک
آزادگی یہ چھوڑ قفس ہم نہ جاسکے
حسن سلوک ضعف سے صحن چمن تلک
تردستیاں ہوں دست و گریبان ہاتھ کی
زیر زمیں بھی پہنچیں گی چاک کفن تلک
روتا ہوں آہوئوں میں تری چشم یاد کر
طوفاں کیے ہیں سینکڑوں دشت ختن تلک
مارا گیا خرام بتاں پر سفر میں میر
اے کبک کہتا جائیو اس کے وطن تلک
میر تقی میر