درد بے اختیار اٹھتا ہے

دیوان اول غزل 525
جب کہ پہلو سے یار اٹھتا ہے
درد بے اختیار اٹھتا ہے
اب تلک بھی مزار مجنوں سے
ناتواں اک غبار اٹھتا ہے
ہے بگولا غبار کس کا میر
کہ جو ہو بے قرار اٹھتا ہے
میر تقی میر