جی ہی جانے ہے آہ مت پوچھو

دیوان اول غزل 405
اس کی طرز نگاہ مت پوچھو
جی ہی جانے ہے آہ مت پوچھو
کہیں پہنچوگے بے رہی میں بھی
گمرہاں یوں یہ راہ مت پوچھو
نوگرفتار دام زلف اس کا
ہے یہی رو سیاہ مت پوچھو
ہیں گی برگشتہ وے صف مژگاں
پھر گئی ہے سپاہ مت پوچھو
تھا کرم پر اسی کے شرب مدام
میرے اعمال آہ مت پوچھو
تم بھی اے مالکان روز جزا
بخش دو اب گناہ مت پوچھو
میر عاشق کو کچھ کہے ہی بنے
خواہ وہ پوچھو خواہ مت پوچھو
میر تقی میر