جی میں ہے کبھو حال غریبانہ کہیں گے

دیوان اول غزل 646
ہم رو رو کے درد دل دیوانہ کہیں گے
جی میں ہے کبھو حال غریبانہ کہیں گے
موقوف غم میر کی شب ہوچکی ہمدم
کل رات کو پھر باقی یہ افسانہ کہیں گے
میر تقی میر